’’بیٹی پرائی کب لگتی ہے ‘‘

بیٹی جب شادی کےبعدسسرال جاتی ہےتب پرائی نہیں لگتی مگرجب وہ میکے آکر ہاتھ منہ دھونے کے بعد سامنے ٹنگے ٹاول کے بجائے اپنے بیگ سے مختصر رومال سے منہ پونچھتی ہے،
 *تب وہ پرائی لگتی ہے
جب وہ باورچی خانے کے دروازے پر نامعلوم سی کھڑی ہو جاتی ہے،
*تب وہ پرائی لگتی ہے
جب وہ پانی کے گلاس کے لئے ادھر ادھر آنکھیں گھماتی ہے،
*تب وہ پرائی لگتی ہے
جب وہ پوچھتی ہے واشنگ مشین چلا لوں کیا
*تب وہ پرائی لگتی ہے
جب میز پر کھانا لگنے کے بعد بھی برتن کھول کر نہیں دیکھتی تو
*تب وہ پرائی لگتی ہے
جب پیسے گنتے وقت اپنی نظریں چراتی ہے
*تب وہ پرائی لگتی ہے
جب بات بات پر غیر ضروری قہقہے لگا کر خوش ہونے کا ڈرامہ کرتی ہے
*تب وہ پرائی لگتی ہے

اور لوٹتے وقت ‘اب کب آئے گی کے جواب میں ‘دیکھو کب آنا ہوتا ہے، یہ جواب دیتی ہے،
*تب ہمیشہ کے لئے پرائی ہو گئی ایسے لگتی ہے

لیکن گاڑی میں بیٹھنے کے بعد جب وہ چپکےسےاپنی آنکھیں چھپا کے خشک کرنے کی کوشش کرتی تو وہ پرایا پن ایک جھٹکے میں بہہ جاتا ہے
 تب وہ پرائی سی لگتی ہے*
نہیں چاہئے حصہ بھیا،میرا می ا سجائے رکھنا

کچھ نہ دینا مجھے،صرف محبت برقرار رکھناپاپا کے اس گھر میں، میری یاد بسائے رکھنا،بچوں کے اذہان میں میرامان برقرار رکھنا، بیٹی ہوں ہمیشہ اس کے گھر کی یہ اعزاز سجائے رکھنا۔
’’اور پھر بیٹی سے ماں کا سفر‘‘
بیٹی سے ماں کا سفر
بےفکری سے فکر کا سفر
رونے سے خاموش کرانے کا سفر
پہلے جو آنچل میں چھپ جایا کرتی تھی.آج کسی کو آنچل میں چھپا لیتی ہیں.
پہلے جو انگلی پہ گرم لگنے سے گھر کو سر پہ اٹھایا کرتی تھی.
آج ہاتھ جل جانے پر بھی کھانا بنایا کرتی ہیں
پہلے جو چھوٹی چھوٹی باتوں پہ رو جایا کرتی تھی
آج وہ لاڈلی بڑی بڑی باتوں کو ذہن میں چھپایا کرتی ہیں.
پہلے بھائی، دوستوں سے لڑ لیا کرتی تھی.
آج ان سے بات کرنے کو بھی ترس جاتی ہیں.
ماں، ماں کہہ کر پورے گھر میں کھل کرتی تھی.
آج ماں سن کے آہستہ سے مسکرایا کرتی ہیں.
10 بجے اٹھنے پر بھی جلدی اٹھ جانا ہوتا تھا.
آج 7 بجے اٹھنے پر بھی لیٹ ہو جایا کرتی ہیں.
اپنے شوق پورے کرتے کرتے ہی سال گزر جاتا تھا.
آج خود کے لئے ایک کپڑا لینے کو ترس جایا کرتی ہے.
سارا دن فارغ ہوکے بھی بزی بتایا کرتی تھی
اب پورے دن کام کرکے بھی کام چور کہلایا کرتی ہیں.
ایک امتحان کے لئے پورے سال پڑھا کرتی تھی.
اب ہر روز بغیر تیاری کے امتحان دیا کرتی ہیں.
نہ جانے کب کسی کی بیٹی کسی کی ماں بن گئی.
کب بیٹی ماں کے سفر میں تبدیل ہو گئی ۔۔۔کچھ نہیں پتہ

admin

Read Previous

حسن علی کی ہونے والی اہلیہ کے طور پر مشہور ہونے والی شامیہ پہلے سے شادی شدہ اور ایک بچے کی ماں نکلیں

Read Next

16 پاکستانی عازمین حجاز مقدس میں جاں بحق

Leave a Reply

آپ کا ای میل ایڈریس شائع نہیں کیا جائے گا۔ ضروری خانوں کو * سے نشان زد کیا گیا ہے